اگر کوئی شخص جان بوجھ کر روزہ توڑ دے تو اس کا کفارہ کیا ہے؟


سوال:

اگر کوئی شخص جان بوجھ کر روزہ توڑ دے تو اس کا کفارہ کیا ہے؟ ( م ۔ ع بھکر)

الجواب بعون الوھاب

الحمد للہ والصلوۃ والسلام علی رسول اللہ امابعد !

اس بارے وضاحت صحیح البخاری کی ایک روایت میں موجود ہے۔ اور رہنمائی کے لئے کافی و شافی ہے۔

آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے روزہ جان بوجھ کر توڑنے والے کے بارے فرمایا:
’’جو آدمی کسی بھی وجہ سے عمداً روزہ توڑ دے تو اس کے لیے کفارہ یہ ہے کہ وہ ایک غلام آزاد کرے، اگر یہ طاقت نہ ہو تو دو ماہ کے مسلسل روزے رکھے، اگر یہ بھی نہ ہو سکے تو ساٹھ مساکین کو کھانا کھلائے‘‘۔ [بخاری، کتاب الصوم، باب إذا جامع فی رمضان … (۱۹۳۶)]

واللہ اعلم بالصواب

الشیخ ابو عمیر السلفی حفظہ اللہ

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: